اسلامک اسٹڈیز پروگرام – آپ کے تاثرات

السلام و علیکم –

آپ اپنی لانگ ٹرم پلاننگ میں ایک ویب سائٹ رکھیں جو اردو زبان میں “ڈسٹنس لیرننگ” میتھڈ سے اسلامی کورسس کروائے ؟

عام دنیاوی تعلیم کیلئے تو کئی انگلش اور اردو ویب سایٹس ہیں – مذہبی تعلیم حاصل کرنے کا فی الحال دستیاب حل صرف مدارس میں داخلہ لے کر پڑھنا ہے؛ جس سے ایک کم عمر طالب علم تو یقینا فائدہ اٹھا سکتا ہے؛ مگر ہم جیسے لوگ جو اسکول کالج کے پڑھے ہوئے ہیں ان کیلئے اس طریقے سے مذہبی تعلیم حاصل کرنا ممکن نہیں ہے – خود سے محنت کر کے اگر فارغ وقت میں کچھ پڑہیں تو یہ پڑھائی کسی ایسے کورس کا متبادل نہیں ہوسکتی جو باقائدہ اس مقصد کیلئے پلان کیا گیا ہو

جو چیز میری ناقص عقل میں نہیں سماتی وہ یہ بات ہے کہ اگر ایک کلاس کی ریکارڈنگ کر کے نیٹ پر اپلوڈ کردی جائے اور طالب علم کو استاد کا ایمیل ایڈریس دے دیا جائے کہ جو بات سمجھ میں نہ آئے وہ ایمیل پر پوچھ لینا – تو پھر اس طالب علم میں جو کلاس میں پڑھتا ہے اور اس طالب علم میں جو اس کی ویڈیو نیٹ پر دیکھ کر پڑھتا ہے کیا فرق ہے ؟ سوائے اس کے کے کلاس میں جو طالب علم آخری سیٹوں پربیٹتے ہیں انہیں نہ تو آواز صحیح آتی ہے اور اکثر بورڈ بھی ٹھیک نظر نہیں آتا جبکہ اگر ریکارڈنگ پروفیشنل طریقے سے کی جائے تو اس میں یہ مسائل نہ ہوں گے اور مستقل طالب علم بھی اس سے دوبارہ ریفر کر سکتے ہیں – مزید یہ کہ عموما لوگوں کے ذہنوں میں ایک ہی طرح کے سوالات اٹھتے ہیں؛ اگر استاد کو جو سوالات موصول ہوں انہیں ان کے جوابات کے ساتھ آن لائن کر دیا جائے تو مستقبل کے طالب علموں کو استاد سے رابطہ کرنے کی ضرورت بھی نہیں رہے گی؛ الا ماشااللہ – پھر استاد ویب کیم کے ذریعے آخری پیپر لے لے –

و السلام

ذیشان ضیا، مسقط، عمان

جون 2010